Posted by: Editor | June 23, 2009

Sectarian Killing: Another Murdered in Quetta

Talib Agha and others killed by unknown gunmen. (Jang Photo)

Talib Agha and others killed by unknown gunmen. (Jang Photo)

Quetta: Principal Commerce College, Amanat Ali Baig has been killed in Quetta. Target killing of a resident of Punjab Province is followed by the assassination of Talib Agha. Principal was attacked this morning. The two target killing incidents seem sectarian terrorism. Yet any religious outfit has not claimed responsibility. All previous incidents of sectarian terrorism in the past have been claimed by Lashkar-e-Jangvi.

Chief Minister Nawab Raisani and City Nazim have strongly condemned Talib Agha’s murder. Members of District Council have criticized the Govt. saying the incidents of target killing are happening in the city as if there is no Govt. and law enforcement agencies at all.

A complete shutter down strike is being observed in Quetta. It was called by Anjuman-e-Tajiraan.

Talib Agha will be laid to rest today Tuesday, June 23 in Hazara Graveyard, Alamdar Road, Quetta.


Responses

  1. فائرنگ کا واقعہ سنیچر کی صبح اس وقت پیش آیا جب مشرقی بائی پاس پر واقع مشروبات بنانے والے ایک کار خانے کے منیجر محمد طاہر میمن اور ان کا اکاونٹنٹ علی محمد اپنی کار میں کارخانے سے شہر کی طرف آ رہے تھے کہ راستے میں جب ایک سپیڈ بریکر پر ان کی کار آہستہ ہوئی تو پہلے سے تعاقب میں لگے ہوئے دو موٹر سائیکل سواروں نے ان پر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں محمد طاہر موقع پر ہلاک ہوگئے جبکہ محمد علی کو شدید زخمی حالت میں سول ہسپتال کوئٹہ لایا گیا جہاں ان کی حالت نازک ہے۔

    ایس پی سریاب محمد خالد نے سول ہسپتال میں بی بی سی سے بات کرتے ہوئے اس واقع کو بھی ٹارگٹ کلنگ قرار دیا اور بتایا کہ محمد طاہر میمن سکھر کا رہائشی تھا جبکہ محمد علی کا تعلق کوئٹہ کے ہزارہ قبیلے سے ہے۔ ان کے مطابق پولیس نے مقدمہ درج کر کے نامعلوم ملزمان کی تلاش شروع کر دی ہے لیکن کوئی گرفتاری عمل میں نہیں آئی ہے اور نہ ہی بلوچ مزاحمت کاروں کی کسی گروپ نے تاحال ان واقعات کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

  2. ایس پی سریاب محمد خالد نے سول ہسپتال میں بی بی سی سے بات کرتے ہوئے اس واقع کو بھی ٹارگٹ کلنگ قرار دیا اور بتایا کہ محمد طاہر میمن سکھر کا رہائشی تھا جبکہ محمد علی کا تعلق کوئٹہ کے ہزارہ قبیلے سے ہے۔ ان کے مطابق پولیس نے مقدمہ درج کر کے نامعلوم ملزمان کی تلاش شروع کر دی ہے لیکن کوئی گرفتاری عمل میں نہیں آئی ہے اور نہ ہی بلوچ مزاحمت کاروں کی کسی گروپ نے تاحال ان واقعات کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

  3. dear qauma

    a fitiha khawni for syed talib agha and other shuhada are going to held on sunday 26th july2009 from 2 pm till 6 pm in milton keynes

    address khoja mosque
    peverel drive milton keynes mk1 1nq


Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

Categories

%d bloggers like this: